لبنان بھر میں بجلی بند ہونے کا خدشہ کیوں پیدا ہوا؟ اصل کہانی کھل کر سامنے آگئی

عراق کے ساتھ ہونے والی ڈیل کے ذریعے کمپنی تیل سے 500 میگاواٹ سے بھی کم بجلی پیدا کرسکتی ہے

لبنان کی سرکاری بجلی کمپنی نے کہا ہے کہ رواں ماہ کے آخر تک ملک بھر میں مکمل طور پر بلیک آؤٹ کا خطرہ ہے کیونکہ اس کے تیل کے ذخائر تیزی سے کم ہو رہے ہیں۔

انٹرنیشنل میڈیا کے مطابق معاشی بحران سے دوچار لبنان پچھلے کچھ مہینوں سے ایندھن کی قلت کا شکار ہے اور بیشتر لبنانی عوام بجلی حاصل کرنے کیلئے پرائیویٹ جنریٹرز کا استعمال کر رہی ہے۔ جمعرات کو سرکاری پاور کمپنی نے ایک بیان میں کہا کہ عراق کے ساتھ ہونے والی ڈیل کے ذریعے کمپنی تیل سے 500 میگاواٹ سے بھی کم بجلی پیدا کرسکتی ہے۔

کمپنی کاکہنا ہے کہ اس کے گریڈ اے اور گریڈ بی فیول آئل کے ذخائر ایک نازک مقام پر پہنچ چکے ہیں جب کہ پہلے ہی کچھ پلانٹس پر تیل ختم ہو چکا ہے اور وہاں اب پیداوار روک دی گئی ہے۔ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ پہلے ہی ملک بھر میں مجموعی طور پر 7 بار بلیک آٹ ہو چکا ہے اور اگر حالات ایسے ہی رہے تو ستمبر کے آخر تک ملک میں ایک اور مکمل بلیک آٹ کا خطرہ ہے۔

Visit To News Source
0 0 votes
Article Rating
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments