ایسی تباہی کبھی نہیں دیکھی، میرا دل پاکستان کے ساتھ ہے: انجلینا جولی

دورہ پاکستان پر آئی ہوئی ہالی وڈ اداکارہ انجلینا جولی نے سیلاب سے متاثرہ علاقوں کا دورہ کرنے کے بعد کہا کہ وہ عالمی برادری سے پاکستان کے لیے اور بھی زیادہ امداد حاصل کرنے پر زور دیں گی۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے پناہ گزین (یو این ایچ سی آر) کی نمائندہ خصوصی اور ہالی وڈ اداکارہ انجلینا جولی نے کہا ہے کہ وہ اس مشکل وقت میں پاکستان کے ساتھ کھڑی ہیں اور عالمی برادری پر سیلاب سے متاثرہ ملک کے لیے مزید امداد پر زور دیں گی۔

انجلینا جولی پاکستان کے دورے پر ہیں جہاں انہوں نے صوبہ سندھ میں سیلاب متاثرین سے ملاقاتیں کیں اور امدادی کاموں کا جائزہ لیا۔

پاکستانی فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کی جانب سے جاری ایک بیان کے مطابق انجلینا جولی نے بدھ کو نیشنل فلڈ رسپانس کوآرڈینیشن سینٹر کا دورہ کیا جہاں انہیں سیلاب کے نقصانات اور امدادی سرگرمیوں کے حوالے سے بریفنگ دی گئی۔

اس موقعے پر انجلینا جولی نے کہا کہ انہوں نے اس طرح کی تباہی کبھی نہیں دیکھی اور وہ عالمی برادری سے پاکستان کے لیے اور بھی زیادہ امداد حاصل کرنے پر زور دیں گی۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ صورت حال دنیا کے لیے انتباہ ہے کہ موسمیاتی تبدیلی نہ صرف حقیقی ہے اور آ رہی ہے بلکہ آ چکی ہے اور اس سے وہ ممالک زیادہ متاثر ہو رہے ہیں جنہوں نے ماحول کو اتنا نقصان نہیں پہنچایا تھا۔

انجلینا جولی نے پاکستانی فوج کی کوششوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ انہوں نے بہت سے لوگوں سے ملاقات کی، جن کی جانیں بچائی گئیں مگر ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ وہ ایسے افراد سے بھی ملیں جن کی زندگیاں اب بھی خطرے میں ہیں۔

Angelina Jolie Pakistan.jpeg

انجلینا جولی نے 21 ستمبر 2022 نیشنل فلڈ رسپانس کوآرڈینیشن سینٹر کا دورہ کیا جہاں انہیں سیلاب کے نقصانات اور امدادی سرگرمیوں کے حوالے سے بریفنگ دی گئی (آئی ایس پی آر)

ان کا کہنا تھا: ’میری بات ان لوگوں سے بھی ہوئی ہے جن سے بات کرتے ہوئے میں سوچتی رہی کہ اگر ضروری امداد نہیں آتی تو یہ شاید آنے والے دنوں میں دنیا میں نہ رہیں۔‘

انہوں نے کہا کہ بہت سے بچے غذائی قلت کا شکار ہیں اور اگر وہ بچ بھی جائیں تو موسم سرما آ رہا ہے اور فصلیں تباہ ہیں تو حالات اور بھی مشکل ہو سکتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا: ’ضروریات اتنی زیادہ ہیں اور ہر کوشش بہت سے لوگوں کے لیے زندگی اور موت کا سوال ہے۔‘

انجلینا جولی نے کہا کہ اس وقت ان کا دل پاکستان کے لوگوں کے ساتھ ہے۔

پاکستان میں رواں برس جون سے معمول سے زیادہ ریکارڈ بارشوں کے بعد سے سیلابی صورت حال ہے اور بلوچستان، سندھ اور جنوبی پنجاب کے کئی اضلاع زیر آب آ چکے ہیں۔

نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق ملک میں 1500 سے زائد اموات ہو چکی ہیں، جن میں پانچ سو سے زائد بچے شامل ہیں۔  

بڑے پیمانے پر تباہی میں لوگوں کے گھر اور مویشی بہہ گئے ہیں جبکہ سڑکیں اور کھڑی فصلیں بھی تباہ ہوگئی ہیں۔

پاکستانی حکام کے مطابق سیلاب کی تباہی سے تین کروڑ سے زائد افراد متاثر ہوئے ہیں اور 30 ارب ڈالر کا نقصان ہوا ہے۔

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں پاکستانی سیلاب کا ذکر

پاکستان کی صورت حال نے دنیا کی نظریں موسمیاتی تبدیلی پر جما دی ہیںم جس پر امریکی شہر نیو یارک میں جاری اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں بھی بات ہو رہی ہے۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیریس نے بدھ کو کلائمٹ ایکشن پر عالمی رہنماؤں سے ملاقات میں اس بات پر زور دیا کہ موسمیاتی بحران سے خاص طور پر ترقی یافتہ ممالک کو ہونے والے نقصان کے معاوضے پر  ’بامعنی اقدامات‘ کا وقت آ گیا ہے۔  

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق اجلاس کے بات میڈیا سے بات کرتے ہوئے سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ نے کہا: ’میرے پیغامات سخت تھے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’سب نے پاکستان میں تباہی کی تصاویر دیکھی ہیں، جو موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے ہیں۔‘ ساتھ ہی انہوں نے زور دیا کہ موسمیاتی بحران سے نمٹنے کی ضرورت ہے۔

انتونیو گوتیریس رواں ماہ پاکستان کا دورہ بھی کر چکے ہیں۔

وزیراعظم شہباز شریف، جو نیو یارک میں موجود ہیں، نے اقوام متحدہ کے سربراہ کا شکریہ ادا کیا۔

اپنی ٹویٹس میں وزیراعظم نے کہا کہ انہوں نے جنرل اسمبلی کی سائیڈ لائنز پر عالمی رہنماؤں سے بات کی اور انہیں پاکستان میں سیلاب اور موسمیاتی بحران سے ہونے والی تباہی کے بارے میں آگاہ کیا۔

وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ وہ دنیا کی توجہ پاکستان کی طرف مرکوز کروائیں گے۔

Courtesy Independent Urdu

0 0 votes
Article Rating
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments