بحریہ ٹائون میں جو کچھ ہوا کافی تکلیف دہ اور قابل مذمت ہے، یہ کافی دنوں پلان کیا جا رہا تھا،شہری عوام کی سرمایہ کاری کو نقصان پہنچایا گیا،پاکستان مخالف نعرے لگانے کا انکشاف

کراچی (این این آئی) مہاجر قومی موومنٹ کے سربراہ آفاق احمد نے اتوار کو پریس کانفرنس میں کہا کہ بحریہ ٹائون میں جو کچھ ہوا کافی تکلیف دہ اور قابل مذمت ہے۔بحریہ ٹائون میں جو کچھ ہوا وہ کافی دنوں پلان کیا جا رہا تھا۔شہری عوام کی سرمایہ کاری کو نقصان پہنچایا گیا۔انہوں نے کہا کہ صرف بحریہ ٹائون میں احتجاج نہیں کیا گیا۔ مجھے نہیں معلوم کہ قوم پرستوں کی کتنی زمین کا کلیم ہے۔اگر قبضہ کیا گیا تھا تو سندھ حکومت کے خلاف احتجاج کیوں نہیں کیا گیا۔جو لوگ وہاں سے گزر رہے تھے ان کی گاڑیوں کو نقصان

پہنچایا گیا۔ملک مخالف نعرے لگائے گئے۔آفاق احمد نے کہا کہ جو کچھ ہوا سندھ حکومت کی مرضی سے ہواہے۔آج مہاجر قوم فیصلہ کرے کہ کے الیکٹرک بھاری بل دیے جاتے ہیں اور آپ ان کے خلاف احتجاج نہیں کر سکے۔سپر ہائی وے پر لوگوں کی مادری زبان پوچھ کر تشدد کیا گیا۔اس واقعہ پر مہاجر قوم سوچے۔آفاق احمد نے کہا کہ اب یہ سوچنا ہے کہ ایک شخص کی غلطی پر سب کو نشانہ بنایا گیا۔اب فیصلہ کرنا ہے کہ اسی طرح ظلم پر خاموش رہنا ہے؟۔خود کو تقسیم کرکے رہنا ہے؟۔انہوں نے کہا کہ الطاف حسین نے جو غلطی کی قوم اسکو دھونے کے لیے نہیں ہے۔لوگ دوسری سیاسی جماعتوں میں جارہے ہیں۔آج بحریہ ٹان میں حملہ ہوا ۔کل سندھ کے دیگر جگہ بھی ہو سکتا ہے۔حکومت کا رویہ سب کے سامنے ہے۔آفاق احمد نے کہا کہ ہزاروں افراد نے ملک مخالف نعرے لگائے۔ گھنٹوں املاک کو نذر آتش کیا گیا مادری زبانیں پوچھ کر شہریوں پر تشدد کیا گیا مہاجر قوم اس معاملے کا سنجیدگی سے جائزہ لے ۔مہاجر قوم اس شہر میں اپنے جائز حقوق کے لیے احتجاج نہیں کرسکتی۔اگر ہم کوئی احتجاج یا بات کریں تو اداروں کو یہ برداشت نہیں۔متعدد بار قوم پرستوں نے اس شہر میں ریلیاں نکالی اور ملک مخالف نعرے لگائے۔ان کے خلاف کارروائی کی جائے ۔آفاق احمد نے کہا کہ جو لوگ مہاجر قوم کو دھمکانا چاہتے ہیں۔ ان سے کہنا چاہتا ہوں کہ یہ سب مہاجر قوم کرکے چھوڑ چکی ہے۔ایسا نہیں کہ ہم سب بھول چکیہیں ۔بطخ کے بچے کو تیرنا نہیں سیکھایا جاتا۔انہوں نے کہا کہ اگر کوئی مہاجر قوم کو لاوارث سمجھتا ہییا کراچی میں لشکر کشی کرنا چاہتا ہے تو وہ یہ سوچے بھی نہیں۔ہم امن پسند لوگ ہیں لیکن ہم کوکوئی بازور طاقت جھکا نہیں سکتا ہے۔حکومت سے امید نہیں قومکو سمجھنا چاہیے۔آفاق احمد نے کہا کہ آج بحریہ ٹائون پر حملہ ہوا ، کل سندھ کے مزید شہری علاقوں پر بھی یہ حملے ہوسکتے ہیں۔ماضی میں بھی پکا قلعہ ، جیسے واقعات ہوئے ۔کلاشنکوف دکھا کر صوبے کی بات کرنے والوں کو دھمکایا جاتا ہے۔اس پر حکومت کو سوچنا چاہیے۔آفاق احمد نے کہا کہ مہاجروں کومتحد ہونے کی دعوت دیتا ہوں ۔مہاجر قوم کے مسائل کے حل کے لئے بہادراباد پی ائی بی اور پی ایس پی کو دعوت دیتا ہوں کہ ملکر مہاجروں کے لیے کام کریں۔

0 0 votes
Article Rating
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments